Mirza Ghalib Biography in Urdu | Hindi

Mirza Ghalib Biography

Mirza Ghalib ka pora naam Mirza Asad-ul-Allah Khan Ghalib tha aur in ke walid ka naam Mirza Abdullah Baig khan tha aur Ghalib in ka takhalus tha, Mirza Ghalib urdu ke ek bohaut bare Shaiyer the. Mirza Ghalib 27 December 1797 mein Aghra mein paida howe  aur 1869 mein wafat howe. Jab in ki umer 5 saal thi tu in ke walid dunniya se inteqal kar gaye aur phir in ki parwarish ka zima in ke chacha Nasar-ul-Allah Baig ne uthai aur jab Mirza Ghalib 9 baras ke howe the in ke chacha bhi wafat kar gaye chacha ke inteqal ke bad Mirza Ghalib apne nanniyal mein agaye aur apni ibtedai taleem Mulvi Muhazzam Ali, Nazir Akbar Abadi aur Mulla Abdul Samad se hasil ki. Jab Mirza Ghalib 13 baras ke howe tu inki shadi Nawab Ilahi Bakhs Khan ki beti Umar-o-Beghum se hui aur phir Mirza Ghalib shadi ke bad Delhi chale aye. Mirza Ghalib ko shairy ka shoq bachpan se hi tha lykin ye shoq ye dheli aa kr pora howa.

Mirza Ghalib ne apni Pori zindagi mein kabi bhi koi si bhi kitab ni khareedi, Mirza Ghalib kitabe karaye par lete aur kitab ko parne ke bad wapis lota dete the, Mirza Ghalib ka karaya ka ghar Delhi mein ek masjid ke barabar mein tha isi manzar ko dhekte howe Mirza Ghalib ne kuch yu arz kia hai.

 

Masjid ke zaire shaya ek ghar bana liya hai,

Ye Banda-e-Kamina humsaya-e-Khuda hai

 

Mirza Ghalib ki Shaiyari dilon ko chu lene wali hoti hai, in ki shaiyari ko na sirf pakistan mein pasand kiya jata hai balke is ke ashar Hindustan mein bhi pare jate hen, Mirza Ghalib ke chand mashoor ashar darj zail hen.

Khuda ke wajud ke liye Mirza Ghalib ke sher:

Na tha kuch tu Khuda tha, kuch na hota tu Khuda hota

Dobaya muj ko hone ne, na hota mein tu kia hota

 

Dosra mashoor sher kuch yu hai.

Na bazam apni, na saqi apna, na shesha apna, na jaam apna

Agar yehi hai nizame hasti tu Ghalib, zindagi ko salaam apna

 

Ek aur mashoor sher is tarha arz kia hai.

Ye duniya matlab ki hai tum kis mukhlis ki baat karte ho Ghalib

Log janaza parne aate hen wo apne sawab ki khatir

Read More Ghalib Poetry….

Mirza Ghalib Biography in Urdu

مرزا غالب کی زندگی کا جائزہ

مرزا غالب کا پورا نام مرزا اسداﷲخاں غالب تھااور ان کے والد کا نام مرزا عبداﷲبیگ خاں تھا اور غالب ان کا تخلص تھا مرزا غالب اردو کے بہت بڑے شعاعر تھے ۔ مرزا غالب 27 دسمبر 1797میں آگرہ میں پیداہوئے اور 15 فروری 1869میں وفات ہوئے ۔ جب ان کی عمر پانچ سال تھی تو ان کے والد دنیا سے انتقال کر گئے اور پھر ان کی پرورش کا ذمہ ان کے چچا نصراﷲ بیگ نے اٹھائی اور جب غالب نو برس کے ہوئے تو ان کے چچا کا بھی وفات ہوگیا اور پھر چچا کے وفات کے بعد مرزا غالب اپنے ننھیال میں آگئے اور اپنی ابتدائی تعلیم مولوی معظم علی، نظیر اکبر آبادی اور ملا عبدالصمد سے حاصل کی ۔ جب غالب 13 برس کے ہوئے تو ان کی شادی نواب الہی بخش خاں کی بیٹی امراوبیگم سے ہوئی اور پھر مرزا غالب شادی کے بعد دہلی چلے آئےمرزا غالب کو شاعری کا شوق تو بچپن سے ہی تھا لیکن یہ شوق ان کا دہلی آ کر پوراہوا۔

مرزا غالب نےکبھی  کوئی کتاب نہیں خریدی مرزا غالب کتابیں کرائے پر لیتے اور کتاب کو پڑھنے کےبعد واپس لوٹا دیتے تھے مرزا غالب کا کرایا کا گھر دہلی میں ایک مسجد کے برابر میں تھا اسی پس منظر کو دیکھتے ہوئے مرزا غالب نے کچھ یوں عرض کیا ہے ۔

                                      مسجد کے زیر سایہ اک گھر بنالیا ہے                                 

                                                        یہ بندہ کمینہ ہمسایہ خداہے

مرزا غالب کی شعاعری دل کو چونے والی ہوتی ہے ، ان کی شعاعری کو نہ صرف پاکستان میں پسند کیا جاتا ہے بلکہ ان کے اشعار کو ہندوستان میں بھی پڑھے جاتے ہیں ، مرزا غالب کے چند مشہور اشعار درج دیل ہیں۔

خدا کے وجود کے لیئے مرزا غالب کے شعر:

    نہ تھا کچھ تو خداتھا ، کچھ نہ ہوتاتو خدا ہوتا

                                                  ڈبویامجھ کو ہونے نے،نہ ہوتامیں توکیاہوتا

دوسرا مشہور شعر کچھ یوں ہے:

                   نہ بزم  اپنی ، نہ ساقی اپنا، نہ شیشہ اپنا ،نہ جام اپنا                            

         اگر یہی ہے نظام ہستی توغالب، زندگی  کو سلام اپنا

ایک اور مشہور شعر اس طرح عرض کیا ہے:

                        یہ دنیا مطلب کی ہے تم کس مخلص کی بات کرتے ہو غالب     

                   لوگ جنازہ پڑھنے آتے ہیں وہ اپنے ثواب کی خاطر                                    

          

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.

Pin It on Pinterest